جنات اور لڑکیاں


منصور مہدی

 قرآن و سنت کے منافی کالاجادو کرنے والوں نے صوبائی دارلحکومت میں ہزاروں کی تعداد میں ڈیرے بنا لیئے جعلی عاملوں اور جادوگروں نے اپنے جادو ٹونے اور موکلوں کے زور پر ایک خوفناک عفریت کی شکل اختیار کر لی اور آکٹوپس کی مانند معصوم لوگوں کو اپنے شکنجے میں جکڑ کر نہ صرف انھیں لوٹنا شروع کر دیا بلکہ مخالفین سے بھاری رقوم لے کر کالے جادو اور زہریلے تعویزوں کے ذریعے لوگوں کی جانوں سے بھی کھیلنا شروع کر دیا معاشی اور سماجی بے چینیوں میں مبتلا لوگ روزی اور روٹی کی طلب میں ان باتونی اور چالباز عاملوں کی باتوں میں آ کر نہ صرف حقیقت کی دنیا سے دور ہو جاتے ہیں بلکہ اپنا دین اور ایمان بھی گنواءدیتے ہیں جبکہ خواتین اپنی عزتوں سے ہاتھ دھو بیٹھی ہیں ۔دیکھتی آنکھوں اس ہونے والے ظلم اور زیادتی کے خلاف نہ کبھی کسی مذہبی یا سماجی تنظیم نے ان لوگوں کے خلاف آواز بلند کی اور نہ ہی کسی سرکاری ادارے نے ان کے خلاف کاروائی کی۔ لاہور کے سرحدی گاﺅں ٹھٹھہ ڈھلواں میں 22 سالہ خاتون کی پر اسرار موت کے حوالے سے جو تفصیلات اکٹھی کیں ان کے مطابق لاہور کے سرحدی گاﺅں ٹھٹھ ڈھلواں میں ایک زمیندار رحمت علی بائس سالہ کنواری لڑکی عابدہ کو ڈیڑھ سال قبل گاﺅں کے قریب ایک آسیب زدہ کنویں سے جن چمٹ گئے اور لڑکی اپنے گھر والوں کے ساتھ آسیب کے سائے میں رہنے کے بعد عجیب و غریب حرکات اور گفتگو کرتی رہتیں جس کی وجہ سے اس کے گھر والے پریشان رہتے اور یہ لڑکی متعدد بار گھر والوں کو سوتے چھوڑ کر خود ہی گھر سے باہر چلی جاتی اور چند گھنٹے گزرنے کے بعد خود ہی واپس آجاتی جس کی وجہ سے اس کے گھر والے اور عزیز و اقارب کافی پریشان رہتے ۔تو انھون نے اس کے آسیب کا علاج کروانے کے لئے بہت سے عاملوں سے رجوع کیا مگر انھوں نے سوائے پیسے بٹورنے کے علاوہ کچھ نہیں کیا ۔چند روز قبل10اگست 2004کو عابدہ اپنے گھر والوں کو سوتے چھوڑ کر اچانک غائب ہو گئی اور جب اسکے گھر والوں کو عابدہ کے گھر مین موجود نہ ہونے کا علم ہوا تو وہ پریشان ہونے کے ساتھ ساتھ اپنی عزت کی حفاظت کے لیے خاموش رہے اور انھوں نے سرحدی علاقے میں ہر وہ جگہ چھان ماری کہ جہاں جہاں لوگوں کے مطابق آسیب اور جن رہتے ہیں مگر وہ نہ ملی پھر اس کی پراسرار ہلاکت کا شک ظاہر کر کے لڑکی کے بھائی بی آر بی نہر پر پہرہ لگائے بیٹھے رہے کہ کہیں اس لاش کی ظالم نے پانی میں نہ پھینک دی مگر عابدہ کہیں نہیں ملی پھر دو روز بعد اچانک صبح فجر کے وقت گھر کی دہلیز پر اندھے منہ پڑی ہوئی تھی کہ دودھ فروش نے گھر کا دروازہ کھٹکھٹایا اور چلا گیا جب کہ اس نے دہلیز میں پڑی لڑکی کے بارے میں کچھ نہ کہا جیسے ہی لڑکی کی ماں نے دروازے میں آکر دیکھا تو اس کی بیٹی عابدہ نیم مردہ حالت میں سانس لے رہی تھی اس نے دیکھتے ہی شور کیا تو گھر کے دوسرے افراد بھی آگئے۔جبکہ لڑکی کی دائیں آنکھ پر لگی خراش سے خون بہہ رہا تھا ابھی اس کے گھر والے اس کے علاج کے لئے جانے کا سوچ ہی رہے تھے کہ عابدہ نے اپنی والدہ کے ہاتھوں میں دم توڑ دیااسی اثنا میں لڑکی کی پراسرار ہلاکت کی خبر پورے گاﺅں میں پھیل گئی اور گاﺅں کے کسی شخص نے تھانہ باٹا پور میں فون پر یہ اطلاع دی کہ عابدہ نامی لڑکی کو ٹھٹھہ ڈھلواں گاﺅں میں اس کے والدین نے پراسرار طور پر قتل کردیا جس پر مقامی پولیس کے اعلیٰ افسر اور دیگر اہلکار موقع پر پہنچ گئے جنہون نے لڑکی کے قتل کے بارے مین ان کے والدین سے پوچھا تو انھوں نے کہا کہ اسے جنات نے مار دیا ہے یہ بات پولیس کی سمجھ میں نہ آئی اور پولیس نے لڑکی کے مرنے کی رپورٹ روزنامچہ مین درج کی اوراسکی لاش کو پوسٹمارٹم کے لئے مردہ خانے میں بھجوا دیا اور بعد از پوسٹ مارٹم لڑکی لاش اسکے والدین کے حوالے کر دی جسے گاﺅں کے قریبی قبرستان میں یہ سمجھ کر دفن کر دیا کہ اسے جنات ہی نے مارا ہے جبکہ اس کے گھر والوں کے مطابق گاﺅں میں اور بھی ایسے لوگ ہیں کہ جن پر جنات کے سائے ہیں ۔گاﺅں کے دیگر اس کی موت کو شک کی نگاہوں سے دیکھتے ہیں کیونکہ آج تک اس گاﺅں میں جنات کی وجہ سے کوئی موت نہیں ہوئی اس کے اصل حقائق کچھ اور ہیں جسے چھپایا جا رہا ہے اور اس کو جنات کے حوالے سے اس لئے مشہور کیا گیا کہ آجکل لوگ کالا جادو کرنے والوں پر یقین رکھتے ہیں جیسا کہ لاہور شہر میں 5 ہزار سے زاہد افراد نے جادو ٹونے کرنے کے ڈیرے بنائے ہوئے ہیں جبکہ بہت سے لوگوں نے یہ دھندا اپنے گھروں پر شروع کیا ہوا ہے جادو کی تاریخ انسانی تاریخ کی مانند بہت قدیم ہے جادو ایک علم ہے جس کے ذریعے لوگوں کے دلوں میں وسوسے پیدا کر کے انہیں سیدے راستے سے بھٹکایا جاتا ہے اور یہ کہنا غلط نہیں ہو گا کہ جادو کابانی ابلیس تھا جس نے انسانوں کے دلوں میں وسوسے ڈالے اور انہیں گمراہ کرنے کا چیلنج کیا تھا اور خدا نے اس کے وسوسوں سے بچنے کی تاکید کی تھی حضرت موسی ؑکے دور میں سامری جادو گر بہت مشہور تھا مگر حضرت موسیؑ کی خدائی طاقت اور ایمان کے سامنے اس کی تمام شعبدے بازیاں کام نہ کر سکیں ۔وقت کے ساتھ ساتھ جیسے حق کی قوتیں کام کرتی رہیں ویسے ہی بدی کی طاقتیں بھی اپنا اثرورسوخ بڑھاتی رہیں ،حق کے ماننے والے نوری علم سے جہاں پر لو گوں کے مسائل حل کرنے میں لگے ہوئے ہیںاور قرآن کی تعلیم کے ذریعے انہیں ذہنی آسودگی دیتے ہیں وہاں پر بدی کا ساتھ دینے والے شیطانی علوم سے عوام الناس کو مختلف مصائب میں مبتلا کرتے رہتے ہیں یہ لوگ نہ صرف کالے علم کی مختلف اقسام جیسے جنتر، منتر اور تنتر سے لوگوں کے دلوں میں وسوسے ڈال کر گمراہ کرتے ہیں بلکہ گندی روحوں ، موکلوں اور د یگر کالی شکتیوں جیسے ہنومان ،کھیترپال ،بھیرو، ناگ دیوتا ، لوناچماڑی، چڑیل، لکشمی دیوی ، کالا کلوا ، پاروتی دیوی ، کلوسادھن، پیچھل پیری ،ڈائن ،ہر بھنگ آکھپا جیسی دیگر بلاﺅں کے ذریعے لوگوں کے دلوں میں وسوسے ڈال کر ایک دوسرے کا مخالف بنا دیتے ہیں اور اس کے عوض ان سے ہزاروں روپے بٹورتے ہیں جبکہ بعض چالباز اور دولت کے پجاری عامل زہر سے لکھ کر تعویز دیتے ہیں جس کو گھول کر پینے والا نہ صرف مختلف قسم کی بیماریوں میں مبتلا ہو جاتا ہے بلکہ بسااوقات ہلاک ہو جاتا ہے اور بعض اوقات زہر کے اثر کی وجہ سے پاگل ہوجاتاہے اور بعض اوقات عالم دیوانگی میں خود کشی کر کے ہلاک ہوجاتا ہے ۔لاہور شہرکاکوئی ایسا محلہ ،گلی ،بازار یا علاقہ نہیں ہے کہ جہاں پر کالے علم کے ذریعے کام کرنے والے جادوگر موجود نہ ہوں۔ معاشی ،سماجی اور گھریلو حالات سے پریشان ہو کر لوگ ان کے پاس چلے جاتے ہیں اور ان کی چکنی چپڑی باتوں میں آ کر اپنا سب کچھ حتی کہ دین اور ایمان بھی گنواءبیٹھے ہیں جبکہ عورتیں گھریلو جھگڑوں جیسے شوہر بیوی کی ناچاقی ، ساس سسر کا مسلہ، نندوںکے طعنوں سے تنگ آ کر ان کے پاس جاتی ہیں جن میں سے اکثر اپنی عزت بھی گنواءدیتی ہیں ۔یہ کالے جادوگر لوگوں کو اپنی طرف راغب کرنے کیلئے بلند وبانگ دعوے کرتے ہیں اور خود کو روحانی سکالر ، روحانی ڈاکڑ، عاملوں کا سردار ،جنات کا بادشاہ ،موکلوں کامالک اور زندہ پیر کامل اور جنات والے ظاہر کرتے ہیں اور اپنا تعلق بنگال،کیرالا، کالی گھاٹ ،تبت، نیپال ،وار سندر کے ہندو پجاریوں سے ملاتے ہیں جبکہ بعض جعلی عامل خود کو حکومت کا منظور شدہ عامل بتلاکر پرائز بانڈ کا نمبر دینے کا دھندا بھی کرتے ہیں اور لوگوں کو دھوکہ دیکر ان سے ہزاروں روپے بٹور لیتے ہیں جبکہ بعض فراڈیوں نے اپنے ڈیروں پر ایسے مرد اور عورتیں ملازم رکھی ہوئیں ہیں جو ضروت مندوں کا ورغلا کر لاتے ہیں یہ لوگ مجبوروں سے پیسے بٹور کر ان سے کام ہونے کے عوض ایسی ایسی شرائط بھی رکھ دیتے ہیں جو ناممکن ہوتی ہیں ان لوگوں کی وجہ سے آج ہر دسواں گھر نت نئے مسائل میں مبتلا ہو چکا ہے اور معاشرے میں کفر اور شرک پھیلانے کا سبب بھی بن رہے ہیں ان کا خلاف آج تک کبھی کسی مذہبی یا سماجی تنظیم نے کوئی آواز بلند نہیں کی اور نہ ہی کسی سرکاری ادارے نے کوئی کاروائی کی لوگ ان کے ہاتھوں لٹ رہے ہیں اور لٹتے ہیں گئے ۔
گوجرانوالہ کا ایک عامل خود کو روحانی سکالر اور روحانی ڈاکڑبتلاتا ہے اور اس کا دعوی ہے کہ اس نے اہرام مصر پر چھ ماہ چلہ کشی کی اور اس کے پاس موکل برائے فروخت موجود ہیںجو چند گھنٹوں میں کام کر دیتے ہیں اور 24 گھنٹے حفاظت کرتے ہیں اور یہ موصوف یہ بھی دعوی کرتے ہیں بر ضغیر کی ہزاروں سال پرانی روحانیت کے طلسماتی نقش کے ذریعے یہ بگڑے ہوئے کام کرتے ہیں اور ناممکن کا ممکن بنا دیتے ہیں کرکٹ کی ہار جیت کا بھی بتاتے ہیں جبکہ گوجرانوالہ کے ایک اورعامل کام نہ ہونے کی صورت میں دس لاکھ روپیہ انعام دینے کا چیلنچ کرتا ہے اور خود کو زندہ پیر کہتا ہے اور لوگوں کو پرائز بانڈ کا نمبر دینے کیلئے لوگوں کو کہتا ہے کہ ہمارا ادارہ دینا کا واحد ادارہ ہے جو حکومت سے منظور شدہ ہے جبکہ ایک عامل خود کو شہنشاہ جنات بتاتا ہے اور 5 لاکھ روپے نقد انعام کام نہ ہونے کی صورت میں دینے کا دعوی کرتا ہے فیصل آباد کا ایک عامل جو خود کو علم نجوم کا بے تاج بادشاہ کہتا ہے اور یہ ھی کام نہ ہونے کی صورت میں 5 لاکھ روپیہ انعام دینے کا دعوی کرتا ہے اور کہتا ہے کہ اگر کوئی جادوگر ،نجومی یا پروفیسر اس کے کاٹ کیئے ہوئے علم پر علم کر سکے یہ موکلات اور جنات سے کام کروانے کا دعوی کرتے ہیں۔لاہور کاایک عامل کالے جادو کی کاٹ و پلٹ کے ماہراعظم کہلواتے ہیں اور کالی طاقتوں کے مہان شکتی مان بنتے ہیں اور یہ ایک فون کال پر بھی کام کرنے کا دعویٰ کرتے ہیں اور کہتے ہیں کہ میں نے پہاڑوں جنگلوں اور دریاﺅں میں چلے کیے ہیں اور کالا جادو سے ہر کام کرواتا ہوں۔جبکہ ایک اور عامل خود کو جنات والی سرکار بتاتے ہیں اور الو کے خونی تعویز سے زندگی اور موت دینے کا دعویٰ کرتے ہیں اور ہر کام ہونے کی ڈھائی گھنٹے اور ڈھائی دن کی گارنٹی دیتے ہیں ۔ایک صاحب کا دعویٰ ہے کہ کوئی بھی انھیں کالے علم اور نجوم میں مات دے تو اسے منہ مانگا انعام دیا جائے گا۔
باغبانپورہ گھاس منڈی کے رہائشی محمد زبیر احمد کا کہنا ہے کہ میرے مالی حالات کچھ عرصے سے بہت خراب تھے ایک دن میں نے ایک اخبار میں گوجرانوالہ کے ایک عامل حسنین شاہ کا اشتہار پڑھا جنہوں نے دعویٰ کیا ہوا تھا کہ وہ پرائز بانڈ کا نمبر بتاتے ہیں اور ان کا دنیا بھر میں واحد ادارہ ہیں جو حکومت سے منظور شدہ ہیں چنانچہ میں ان سے پرائز بانڈ کا نمبر لینے چلا گیا تو انھوں نے مجھ سے دس ہزار روپے مانگے کہ چونکہ یہ کام موکل کرتے ہیں اور ان پر خرچ آتا ہے۔میرا اور ان کا پانچ ہزار روپے میں معاملہ طے ہوگیا اور کام نہ ہونے کی صورت میں رقم کی واپسی کا انھوں نے وعہدہ کیا ۔میں نے کسی عزیز سے رقم ادھار لیکر انھیں دی تو انھوں نے مجھے ایک نمبر دیا مگر جب قرعہ اندازی میں میرا نمبر نہ نکلا تو میں نے انھیں کہا تو انھوں نے کہا اپنے وزن کے برابر چھوٹا گوشت لیکر اس کے چار حصے کرو ایک حصہ قبرستان میں ایک حصہ دریا میں ایک حصہ ویران جگہ پر اور ایک حصہ کوﺅں اور پرندوں کو ڈالوں پھر نمبر نکلے گا جس پر میں کہا کہ یہ بات پہلے تو نہیں بتائی تھی تو انھوں نے کہا یہ کام کرنا پڑے گا کیونکہ تم سے موکل ناراض ہیں اور انھیں راضی کرنے کے لئے گوشت دینا پڑے گا ۔تب میں نے انھیں کہا کہ میں نے تو پہلے ہی رقم ادھار لیکر دی تھی آپ میری رقم واپس کر دیں تو انھوں نے رقم واپس کرنے سے انکار کر دیا ۔زبیر احمد نے کہا کہ جعلی پیر نے مجھ سے فراڈ کیا اور دھوکہ دیکر مجھ سے رقم اینٹھ لی۔جبکہ وحدت روڈ کی رہائشی خالدہ بی بی بتایا کہ میرے شوہر نے جب کسی اور عورت میں دلچسپی لینی شروع کی تو میں نے ایک عامل سے رابطہ کیا تو اس نے مجھے بہت حوصلہ دیا اور کہا صرف چند دنوں میں تمہارا شوہر اس عورت کو چھوڑ کر تمہارے پاس آجائے گا اس نے آہستہ آہستہ مجھ سے بیس ہزار روپے لے لئے مگر میرا شوہر پھر بھی واپس نہ آیا ۔لاہور کی ہی رہائشی ایک عورت نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے پر بتایا کہ میں بھی ایک گھریلو پریشانی کے چکر میں ایک پیر کے پاس گئی تو اس نے مجھ پر ڈورے ڈالنے شروع کر دیے ۔لاہور کی رہائشی خالدہ بی بی نے بتایا کہ میں ایک پڑھی لکھی عورت ہوں میرے بچے بیرون ملک مقیم ہیں ۔میں ایک گھریلو چکر میں پھنس کر کالا جادو کرنے والوں کے پاس گئی ان لوگوں نے کالے جادو کے ذریعے میری دولت اور جائیداد ہڑپ کرنے کے لئے میرے پیچھے بد روحیں ڈال دیں جنہوں نے مجھے تنگ کرنا شروع کردیا وہ میرا خون چوستی تھیں ۔چنانچہ میں ان کے توڑ کے لئے دیگر کے پاس گئی اس طرح میری زندگی اجیرن ہو گئی کسی نے مجھے تعویز دیے تو کسی نے سور کی ہڈی اور کسی نے کتے کی ہڈی اور کسی نے ریچھ کی ہڈی دی کہ یہ چیزیں تمہاری ان بد روحوں سے حفاظت کریں گی مگر مجھے ابھی تک کوئی آرام نہیں آیا ۔یہ عورت بہت پریشان تھی اور کسی بھی صورت میں ان جعلی پیروں کے بارے میں مزید نہیں بتاتی کیونکہ اسے ڈر ہے کہ اگر اس نے ان کا نام بتا دیا تو مجھے مار دیں گے۔باغبانپور لاہور کے حبیب احمد نے بتایا کہ ایسے جعلی اور دونمبر پیروں کے خلاف کاروائی ہونی چاہیے جبکہ ایک آدمی نے کہا کہ ان لوگوں کی وجہ سے گھر برباد ہو رہے ہیں اور لوگوں کے مسائل حل ہونے کی بجائے بڑھتے جارہے ہین چنانچہ ایسے لوگوں کے خلاف سخت کاروائی کی جائے۔محمد ادریس نے کہا کہ جیسے مریدکے میں اب تک سات بچے ہلاک ہو چکے ہیں اور یہ بھی کالا جادو کرنے والوں کی کارستانی لگتی ہے چنانچہ ایسے لوگوں کو عبرت ناک سزا دی جائے سرعام پھانسیوں پر لٹکایا جائے۔ مولوی نذیر احمد نے کہا کہ کالا جادو اسلام میں حرام ہے اور اسے کرنے والا کافر ہو جاتا ہے اور ایسے لوگ جو سرعام کالا جادو کرنے کا دعویٰ کرتے ہیں ان کے خلاف کاروائی ہونی چاہیے یہ لوگ مسلمان بھی کہلاتے ہیں کالی دیوی جیسے دیگر ہندو کے دیوی دیوتاﺅں سے ہر کام کروانے کا دعویٰ کرتے ہیں اور ضرورت مند لوگوں کو دین اور ایمان سے دور کر رہے ہیں۔   

5 thoughts on “جنات اور لڑکیاں

  1. ماشاء اللہ بہت عمدہ آرٹیکل ہے۔ ہمارے معاشرے میں دینی مسائل سے ناواقفیت کی بناء پرلوگ کثرت سےنام نہاد عاملوں ،جادوگروں اور بنگالی بابوں کے دام تزویر میں پھنس کر متاع دنیا کےساتھ دولت ایمان بھی لٹا بیٹھتے ہیں قرآن وسنت کی روشنی میں جادوٹونہ،علم نجوم اور جفرورمل وغیرہ قطعی ممنوع امور ہیں لیکن اس کے باوجود لوگوں کی ایک بڑی تعداد ان میں مشغول ہے۔ اس سلسلے میں ایک کتاب حال ہی میں بنام ” جنات کا پوسٹ مارٹم” کے نام سے kitabosunnat.com پر اپ لوڈ کی ہے۔ زیر نظرکتاب میں فاضل مؤلف نے ان تمام معاملات کا قرآن وسنت کی روشنی میں بے لاگ جائزہ لیا ہے اور ان کی ممانعت وقباحت ثابت کرنے کےساتھ ساتھ نجومیوں ،رملوں جفریوں ،کاہنوں اور نام نہاد عاملوں وغیر ہ کی کتابوں ،مقالوں ،اشتہاروں اور ان کےمنہ پھٹ دعوؤں کی روشنی میں ان کی کذب وتضادبیانیاں پيش کرکے انہیں جھوٹا ثابت کیا ہے اس کتاب کے مطالعہ سے قارئین نہ صرف جھوٹے عاملوں کے مکروفریب سے بچ سکیں گے بلکہ جادو او رجنات کے توڑ کے شرعی طریقوں سے بھی آگاہی حاصل کرسکیں گے –(انشاء اللہ )

جواب دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s